733

مشیر تعلیم نے کوہاٹ بورڈ میں پوزیشن ہولڈرز میں ڈھائی کروڑ تقسیم کر دیے

مشیر تعلیم نے کوہاٹ بورڈ میں پوزیشن ہولڈرز میں ڈھائی کروڑ تقسیم کر دیے

مشیر تعلیم خیبر پختونخوا نے کوہاٹ بورڈ کے87 پوزیشن ہولڈرز طلبہ میں تقریباً ڈھائی کروڑ روپے تقسیم کر دیئے۔
خیبر پختونخوا کے مشیر برائے تعلیم ضیاء اللہ خان بنگش نے ہفتہ کے روز ثانوی و اعلیٰ ثانوی تعلیمی بورڈ کوہاٹ میں “ستوری دا پختونخوا “پروگرام کے تحت میٹرک اور انٹر کے سائنس اور آرٹس کے 2018ء کے 87 پوزیشن ہولڈر طلباء و طالبات میں 2 کروڑ 47 لاکھ روپے کے نقد انعامات تقسیم کئے۔ میٹرک کے فی طالبعلم /طالبہ کو 1 لاکھ 20 ہزار روپے سالانہ جبکہ انٹر کے فی طالبعلم/طالبہ کو1 لاکھ 80 ہزار روپے سالانہ دیئے گئے۔ انہوں نے سپورٹس کے شعبے کے ٹرافیاں بھی تقسیم کیں۔ بورڈ کے چیئرمین الیاس آفریدی نے اس موقع پر بورڈ کی سالانہ کارکردگی پیش کی۔مشیر تعلیم نے اپنے خطاب میں کہا کہ صوبائی حکومت نے 2011ء میں سرکاری سکولوں کے ذہین اور قابل طلباء کیلئے یہ پروگرام شروع کیا تھا۔ جس کے تحت میٹرک اور انٹر کے ٹاپ10طلبہ کو بالترتیب 10ہزار اور 15 ہزار روپے دئیے جاتے تھے جسے پی ٹی آئی کے صوبائی حکومت نے 2013ء میں ٹاپ 20 طلبہ تک بڑھایا۔ صوبائی حکومت ہر سال ڈھائی کروڑ روپے اس پروگرام کے تحت تقسیم کرتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت 2011ء سے 2018ء تک8سال میں 7 سو ذہین طلباء و طالبات میں 20کروڑ روپے تقسیم کر چکی ہے۔ضیاء اللہ بنگش کا کہنا تھا کہ جن سرکاری تعلیمی اداروں کے اچھے رزلٹ آئے ہیں۔ وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا محمودخان خود انہیں انعامات سے نوازیں گے جبکہ خراب کارکردگی کے حامل کو شوکاز نوٹس دیئے جائیں گے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ شعبہ تعلیم میں اصلاحات کے نتائج سامنے آنا شروع ہوگئے ہیں اور اللہ تعالیٰ کے فضل و کرم سے صوبہ پختونخوا تعلیم میں پورے ملک کیلئے رول ماڈل بن چکاہے۔ مشیرتعلیم نے کہا کہ سرکاری سکولوں میں اساتذہ کی حاضری یقینی بنادی گئی ہے۔ آئی ٹی تعلیم کو نچلی سطح سے متعارف کرایا جا رہا ہے، سکولوں میں سمارٹ کلاس رومز بنائے جا رہے ہیں اور بچوں کا ڈراپ آؤٹ شرح کم کرنے کیلئے سیکنڈ شفٹ کلاسیں شروع کرنے کیلئے تمام سکولوں کو درجہ بلندی کی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ والدین کا سرکاری سکولوں پر اعتماد کی بحالی ہماری حکومت کی سب سے بڑی کامیابی ہے اور انشاء اللہ عوامی توقعات کے مطابق ہر سطح پر معیاری تعلیم عام کریں گے۔

شیئر کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں